وزیراعلیٰ پنجاب سے صوبائی وزیر خزانہ کی ملاقات،ہاشم جواں بخت نے عثمان بزدار کو محکمہ خزانہ کی دو سالہ کارکردگی رپورٹ پیش کی

News Date: 
Tuesday, September 15, 2020

لاہور15ستمبر:وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارسے وزیر اعلی آفس میں صوبائی وزیر خزانہ ہاشم جواں بخت نے ملاقات کی - ہاشم جواں بخت نے وزیر اعلی عثمان بزدار کو محکمہ خزانہ کی دو سالہ کارکردگی رپورٹ پیش کی-صوبائی سیکرٹری خزانہ عبداللہ سنبل بھی اس موقع پر موجود تھے-وزیراعلیٰ عثمان بزدارنے محکمہ خزانہ کی دو سالہ کارکردگی کو سراہا-وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے مالیاتی نظم و ضبط برقرار رکھنے، غیر ضروری اخراجات میں مزید کمی، بچت اور کفایت شعاری کی پالیسی پر سختی سے عملدرآمد کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ  کوویڈ19کے چیلنج سے نمٹنے کے لیے محکمہ خزانہ نے مؤثر حکمت عملی اختیار کی- محکمہ صحت کو اضافی وسائل کی فراہمی کے ساتھ ترقیاتی منصوبوں کیلئے فنڈز کے اجراء کو یقینی بنایا -کوویڈ 19سے متاثرہ معیشت کو سہارا دینے کے لیے 56.5ارب سے زائد کا ٹیکس ریلیف پیکج دیا- کورونا متاثرین کے سماجی تحفظ کے لیے انصاف امداد پروگرام کے تحت اربوں روپے مہیا کیے -20سے زائدخدمات پر ٹیکس کی شرح 16فیصدسے کم کر کے 5فیصدکی اور شہری علاقوں میں سٹیمپ ڈیوٹی کی شرح5فیصد سے کم کر کے1فیصدکی-ای پنجاب موبائل/انٹرنیٹ اپلی کیشن کی مدد سے 12سے زائدسرکاری واجبات کی آن لائن ادائیگی کو ممکن بنایا -انہوں نے کہا کہ عبوری صوبائی مالیاتی کمیشن تشکیل دیا جا چکا ہے - پنجاب حکومت عام آدمی کی زندگیوں میں آسانیاں لانے کیلئے نئے پروگرامز پر عملدرآمد کررہی ہے-احساس پنجاب پروگرام کے تحت کم وسائل رکھنے والے طبقے پر معاشی بوجھ کم کرنا ہمارا مشن ہے-پنجاب حکومت نے کاروبار میں آسانیاں پیدا کرنے کیلئے منفرد پروگرام شروع کیا ہے -صوبائی وزیر خزانہ ہاشم جواں بخت نے  وزیر اعلی عثمان بزدار کو بتایا کہ دو سال میں کابینہ سٹینڈنگ کمیٹی برائے فنانس اینڈ ڈویلپمنٹ میں 14.5ارب جبکہ محکمہ خزانہ کی جانب سے 75.58ارب روپے کی اضافی فنڈز کی سفارشات مسترد کی گئیں -معاشی سرگرمیوں کے فروغ اور روزگار کے مواقع میں اضافے کے لیے بینک آف پنجاب کی75نئی شاخوں کاآغاز کیا گیا اورمالی سال2018میں بینک آف پنجاب کو 12.0 ارب روپے کامنافع ہوا جبکہ سال2019میں 14.0ارب روپے کا منافع ہوا جو بینک آف پنجاب کو ہونے والا اب تک کا سب سے زیادہ منافع ہے- انہوں نے بتایا کہ پبلک سیکٹر کمپنیوں میں انتظامی امور کو بہتر بنایا گیا ہے-کمپنیوں کے مالی امور کاآڈٹ کرایا گیااور ان کے وسائل میں اضافے کیلئے بزنس پلان ترتیب دئیے گئے ہیں -